آئِنْدَہ {آ + اِن + دَہ} (فارسی)

آمدن آئِنْدَہ

فارسی زبان میں مصدر آمدن سے اسم فاعل ہے اصل میں آیندہ ہے جبکہ اردو میں عام طور پر آئندہ مستعمل ہے۔ اردو میں بطور اسم صفت اور کبھی بطور اسم اور کبھی بطور متعلق فعل بھی مستعمل ہے سب سے پہلے 1802ء میں "خرد افروز" میں مستعمل ملتا ہے۔


صفت ذاتی (مذکر - واحد)

جمع استثنائی: آئِنْدَگان {آ + اِن + دَگان}

متغیّراتترميم

آیِنْدَہ {آ + یِن + دَہ}

معانیترميم

آنے والا۔

"ممکن ہے ..... کہ آئندہ جنم میں بھی آپ کا میرا تعلق اس سے زیادہ ہو جائے۔" [1]


معانی2ترميم

اسم ظرف زمان [2]

جمع غیر ندائی: آئِنْدَگان {آ + اِن + دَگان}

آنے والا زمانہ، مستقبل۔

"آئندہ کی فکر آج فضول ہے۔" [3]


معانی3ترميم

متعلق فعل

مستقبل میں، آنے والے زمانے میں، آگے، اس کے بعد۔

"پھر یہ سوچا کہ آیندہ جو کچھ کہ ہو سو ہو۔" [4]

انگریزی ترجمہترميم

in future.

مترادفاتترميم

آگے آگے کَل{1} آگے مُسْتَقْبِل دوبارَہ

مرکباتترميم

آئِنْدَہ کو، خوش آئند

حوالہ جاتترميم

  1     ^ ( 1908ء، اتالیق خطوط نویسی، 20 )
  2     ^ ( مذکر - واحد )
   3    ^ ( 1961ء، مولوی عبدالحق، لغت کبیر، 267:2 )
   4    ^ ( 1842ء، الف لیلہ، عبدالکریم، 174:2 )