آسُودَہ {آ + سُو + دَہ} (فارسی)

آسُودَن آسُودَہ

فارسی مصدر آسودن سے علامت مصدر ن گرا کرہ بطور لاحقۂ حالیہ تمام لگانے سے آسودہ بنا۔ فارسی میں حالیہ تمام ہے، اردو میں بطور اسم صفت مستعمل ہے۔ گاہے بطور متعلق فعل بھی مستعمل ہے۔ سب سے پہلے 1649ء میں "خاور نامہ" میں مستعمل ملتا ہے۔

صفت ذاتی

جمع: آسُودَگان{آ + سُو + دَگان}

معانیترميم

جو آرام سے ہو، خوش دل، مطمئن۔

"تمام آدمی واقعاً پوری طرح آسودہ ہو گئے۔" [1]

2. جس کی مالی حالت اچھی ہو، خوشحال، فارغ البال۔

"اس کے چہرے سے یہ معلوم ہوتا تھا کہ کوئی بھلا آدمی ہے اپنے گھر سے آسودہ اور اقبال مند۔" [2]

3. جس کا پیٹ یا جی کسی چیز سے بھر گیا ہو، سیر۔

؎ لذت درد سے آسودہ کہاں دل والے

ہیں فقط درد کی حسرت میں کراہے جاتے [3]

4. آرام سے سویا ہوا، خوابیدہ، (مجازاً) مدفون۔

"ہزاروں بزرگ صاحب کمال اِس سرزمیں میں آسودہ ہیں۔" [4]

5. پرسکون، جس میں اضطراب یا اضطرار نہ ہو۔

؎ شب سکوت افزا، ہوا آسودہ، دریا نرم سیر

تھی نظر حیراں کہ یہ دریا ہے یا تصویر آب [5]

انگریزی ترجمہترميم

satisfied, contented; satiated, full, glutted; easy, at ease, tranquil; affluent


معانی2ترميم

متعلق فعل

بے فکری یا خوشحالی کے ساتھ، مطمئن ہو کر، چین سے۔

؎ کھیا اس وقت یو نچ جو میں اتھا

تو آسودہ جھگڑے تھے کچھ نہیں اتھا [6]

انگریزی ترجمہ2ترميم

In easy circumstance (in respect of), well-off; wee-to-do

مترادفاتترميم

سُکھّی آرْمِیدَہ سیر پُرسُکُون فارِغ

متضاداتترميم

دُکھّی رَنْجِیدَہ بے حال

مرکباتترميم

آسُودَہ خاطِر، آسُودَہ کار، آسُودَہ حال، آسُودَہ تَن

رومنترميم

Aasudah

حوالہ جاتترميم

   1    ^ ( 1923ء، سیرۃ النبی، 3، 134 )
   2    ^ ( 1924ء، خونی راز، 96 )
   3    ^ ( 1957ء، تار پیراہن، 50 )
   4    ^ ( 1805ء، آرائش محفل، افسوس، 75 )
   5    ^ ( 1924ء، بانگ درا، 288 )
   6    ^ ( 1649ء، خاور نامہ، 135 )