ٹوٹْکا {ٹوٹ (و مجہول) + کا} (سنسکرت)

سنسکرت سے اردو زبان میں داخل ہوا۔ اس لفظ تنترکہ ہے۔ 1683ء، میں "سہاگن نامہ" میں استعمال ہوا۔

اسم نکرہ (مذکر - واحد)

واحد غیر ندائی: ٹوٹْکے {ٹوٹ (و مجہول) + کے}

جمع: ٹوٹْکے {ٹوٹ (و مجہول) + کے}

جمع غیر ندائی: ٹوٹْکوں {ٹوٹ (و مجہول) + کوں (و مجہول)}

معانیترميم

1. جادو، ٹونا، جنتر منتر، وہ جتن جو کسی بیماری یا بری بات کے دفع کرنے یا کسی بات کے حاصل کرنے کے لیے کیا جائے۔

"کل اس جوگی کے درشن کیے اور بھبھوت لا کے کوئی ٹوٹکا کیا"۔، [1]

مترادفاتترميم

ٹونا، جادُو،

مرکباتترميم

ٹوٹْکے ہائی

حوالہ جاتترميم

  1. ( 1900ء، خورشید بہو، 85 )

مزید دیکھیںترميم