اردوترميم

اشتقاقیاتترميم

فارسی یار سے لیا گیا۔

جنسِ مخالف: سَہیلی {سَہے + لی}

جمع غیر ندائی: یاروں {یا + روں (و مجہول)}

اسمترميم

یار مذکر (ہندی ہجے यार)

  1. مددگار، معاون، ساتھی، حمایتی، دستگیر، یاری وغیرہ، مجھ، سہائی، حامی، ساتھ دینے والا، سہایتا کرنے والا۔

؎ جان تنہا بدن کو پھوڑ گئی

کون دنیا میں ہے کس کا یار، [1]

  1. دوست، آشنا، متر، ہمدم، رفیق، محب، مخلص، غم خوار۔

؎ رنگ اہل جہان کا یہ ہے

کل ہی دشمن ہے جو کہ یار ہے آج، [2]

  1. معشوق، محبوب، پیارا، من برن، من مومن، دلربا، پریتم، دلبر، صنم۔

؎ یار سے چھیڑ چلی جائے اسد

گر نہیں وصل تو حسرت ہی سہی، [3]

  1. دھکڑ، دھکڑا، لگواڑ، آشنا۔
  1. بجائے خود، آپ اپنا، میں، ہم۔
  1. خدا تعالٰی کی طرف اشارہ، رب، خدا، اللہ، بھگوان، رام۔

مترادفاتترميم

خَلِیل، ظَہِیر، مُخْلِص، دوسْت، آشْنا، رَفِیق،

مرکباتترميم

یار باز، یار باش، یار باشی، یارِ شاطِر، یارِ غار، یار فَروش، یار فَروشی

حوالہ جاتترميم

  1. ( مجروح )
  2. ( مجروح )
  3. ( غالب )

فارسیترميم

اسمترميم

یار (جمع یاران)

  1. یار