غَزا {غَزا} (عربی)

غ ز و، غَزا

عربی زبان سے ثلاثی مجرد کے باب سے مصدر ہے اردو میں بطور حاصل مصدر مستعمل ہے۔ 1503ء کو "نوسرہار" میں مستعمل ملتا ہے۔

اسم کیفیت (مؤنث)

معانیترميم

1. دین کے دشمنوں کے ساتھ جنگ، کافروں اور مشرکوں سے لڑائی، جہاد۔

؎ ہزار سلطنتیں صدقے اس مجاہد کے

غزا کے واسطے جو عاقبت بدوش آیا، [1]

انگریزی ترجمہترميم

waging war, going forth to war (especially against in fields)

مترادفاتترميم

غَزْوَہ، جَنْگ، قِتال، رَزْم، دَغا، لَڑائی

حوالہ جاتترميم

  1. ( 1931ء، بہارستان، 122 )