غَم {غَم} (عربی)

غ م م، غَم

عربی زبان سے ماخوذ اسم ہے جو اصلاً ثلاثی مجرد کے باب سے مشتق ہے اردو میں اپنے اصل معنی اور بدلی ہوئی ساخت کے ساتھ بطور اسم استعمال ہوتا ہے تحریراً سب سے پہلے 1503ء کو "نوسرہار" میں مستعمل ملتا ہے۔

اسم کیفیت (مذکر)

جمع غیر ندائی: غَموں {غَموں (و مجہول)}

معانیترميم

1. رنج، اندوہ، دکھ، ملال، الم، افسوس (خوشی کا نقیض)۔

"عمل اور ایجاد کے شوق کی والہانہ تکمیل میں جو تکلیفیں اٹھانی پڑتی ہیں.... وہ غم نہیں مضرابِ زندگی ہیں۔"، [1]

2. سوگ، ماتم، گریہ و زاری۔

؎ اس کے جانے سے ہے ہر چمن محوِ غم

ماند پڑنے لگی شہر کی دلکشی، [2]

3. فکر، پروا، پریشانی، اندیشہ۔

؎ کوئی زباں بھی سیکھیں غم اس کا کچھ نہیں ہے

غم ہے یہی جو چھوڑیں مذہب کی پاسداری، [3]

4. یاد، خیال، دھیان، فکر محبوب۔

؎ گل ہاتھوں میں دیئے ترے چھلّوں کی یاد میں

دل پر تمہاری چوڑیوں کے غم میں کھائے داغ، [4]

انگریزی ترجمہترميم

grief, sorrow, concern

مترادفاتترميم

داغ، اَفْسوس، گھُن، سوخْتَگی، صَدْمَہ، رَنْج، حُزْن، اَفْسُرْدَگی، اَنْدوہ، مَلال، اَلَم، ماتَم، سوگ،

مرکباتترميم

غَم اَفْروز، غَم اَنْدوخْتَہ، غَم اَنْدوز، غَم اَنْگیز، غَم آشْنا، غَمِ آگَہی، غَم آگِینی، غم آگِیں، غَم آلُود، غَمِ بَہار، غَم پَرْوَر، غَم پَرْوَرْد، غَم پَسَنْد، غَمِ پِنْہاں، غَمِ جاناں، غَمِ جاں گَزا، غَمِ حَیات، غَم خانَہ، غَم خوار، غَم خوارْگی، غَم خواری، غَم خور، غَم خُورْدہ، غَمِ دِل، غَمِ دَوراں، غَمِ دوسْت، غَم دِیدَہ، غَم رَسِیدَہ، غَمِ روزگار، غَم زِدا، غَم زَدَہ، غَم زَدی، غَم سَرا، غَم طِراز، غَم غَلَط، غَم غَلَطی، غَمِ فَرْدا، غَم کا پُتْلا، غَم کا پَہاڑ، غَم کا مارا، غَم کَدَہ، غَم کَش، غَم کَشی، غَم کَشِیدَہ، غَم کوش، غَم کوشی، غَم کی پھانْس، غَم کی فَوج، غَم کی مَوج، غَم گُسار، غَم گُساری، غَم گُسِل، غَم گِیتی، غَمِ مَرْگ، غَم ناکی، غَم نامَہ، غَم نَصِیب، غَم و اَنْدَوہ، غَم و غُصَّہ، غَمِ ہَسْتی، غَمْگِین، غَمْگِینی، غَم آشام، غَم نِگار، غَم نِگاری

حوالہ جاتترميم

  1. ( 1984ء، مقاصد و مسائل پاکستان، 126 )
  2. ( 1988ء، طلوعِ افکار، کراچی، ستمبر، اکتوبر، 139 )
  3. ( 1912ء، گلزار بادشاہ، 122 )
  4. ( 1872ء، فیض نشان، 98 )

مزید دیکھیںترميم

اسمترميم

غم


فارسیترميم

اسمترميم

غم

  1. غم